مبشر کھوکھر قتل کیس مبشر کھوکھر کو قریب سے آنکھ میں گولی لگی۔ لاہور کے علاقے ڈیفنس میں نامزد صوبائی وزیر اسد کھوکھر کے بھائی مبشر کھوکھر 166

مبشر کھوکھر قتل کیس مبشر کھوکھر کو قریب سے آنکھ میں گولی لگی۔

مبشر کھوکھر قتل کیس مبشر کھوکھر کو قریب سے آنکھ میں گولی لگی۔

لاہور کے علاقے ڈیفنس میں نامزد صوبائی وزیر اسد کھوکھر کے بھائی مبشر کھوکھر کی پوسٹ مارٹم رپورٹ آ گئی ہے۔ تفصیلات کے مطابق پولیس نے بتایا کہ مقتول مبشر کھوکھر کا پوسٹ مارٹم مکمل کر لیا گیا ہے۔

مبشر کھوکھر کی لاش جنرل ہسپتال میں پوسٹ مارٹم مکمل کرنے کے بعد ورثاء کے حوالے کردی گئی۔ رپورٹ کے مطابق ایک گولی مبشر کھوکھر کے سر کے پیچھے سے بائیں آنکھ میں لگی۔ یاد رہے کہ بشیر کھوکھر کو کل رات اسد کھوکھر کے بیٹے کی شادی کی تقریب میں گولی مار کر قتل کر دیا گیا تھا۔

شادی کی تقریب میں وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار بھی موجود تھے۔ تقریب میں صوبائی وزراء سمیت اہم شخصیات بھی موجود تھیں۔ لیکن وزیر اعلیٰ کی سکیورٹی نے حملہ آور کو پکڑ لیا۔

وزیراعلیٰ پنجاب نے آئی جی سے رپورٹ طلب کی تھی اور واقعے کی تحقیقات کا حکم دیا تھا۔ عثمان بزدار نے کہا کہ سیکیورٹی انتظامات کی بھی جامع انکوائری ہونی چاہیے اور غفلت کے ذمہ داروں کی نشاندہی کی جائے اور مزید کارروائی کی جائے۔

پولیس کے مطابق ملزم ناظم نے ابتدائی تفتیش میں بتایا کہ وہ 8 بجے شادی کی تقریب میں آیا جسے سیکیورٹی نے چیک نہیں کیا۔ ملزم جا کر تقریب میں مہمانوں کے ساتھ بیٹھ گیا۔ ملزم نے بتایا کہ اسد کھوکھر اور اس کا بھائی مدثر دو مرتبہ میرے پاس سے گزرے۔ جب وزیر اعلیٰ پنجاب نے واپسی شروع کی تو تینوں بھائی اس کے ساتھ تھے۔

میں مارکی سے باہر وزیراعلیٰ کے پیچھے گیا۔ ملزم کے مطابق جب وزیر اعلیٰ پنجاب گاڑی میں بیٹھے ہوئے تھے تو میں نے آگے بڑھ کر مبشر پر فائرنگ کر دی۔ اس نے جس پستول سے فائر کیا وہ لائسنس یافتہ تھا اور 40 ہزار روپے میں خریدا گیا۔

ملزم ناظم نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ مبشر کھوکھر اپنے بھائی بیلے اور چچا کے قتل میں ملوث تھا جبکہ ملزم نے منشا کے قتل کے جرم میں 8 سال جیل میں گزارے ہیں ، اس نے قتل کی منصوبہ بندی خود کی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں